کراچی میں ٹینکر مافیا کے سربراہان مراد علی شاہ اور بلاول زرداری ہیں، حلیم عادل


مجھ سے جھگڑا ہے تو ساڑھے 4 لاکھ عوام کو سزا کیوں دی جارہی ہے؟ اگر پانی نہیں ملا تو ان کا گھیراؤ کریں گے (فوٹو : فائل)

مجھ سے جھگڑا ہے تو ساڑھے 4 لاکھ عوام کو سزا کیوں دی جارہی ہے؟ اگر پانی نہیں ملا تو ان کا گھیراؤ کریں گے (فوٹو : فائل)

 کراچی: اپوزیشن لیڈر سندھ اسمبلی حلیم عادل شیخ نے کہا ہے کہ کراچی میں نلکے میں پانی آتا نہیں ٹینکر میں ختم ہوتا نہیں، یہاں ٹینکر مافیا کا راج ہے جب کہ ٹینکر مافیا کے سربراہان مراد علی شاہ اور بلاول زرداری ہیں۔

سندھ اسمبلی کے اجلاس سے قبل میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے حلیم عادل شیخ کا کہنا تھا کہ اس وقت سندھ کے حالات خراب ہوچکے ہیں، کرپشن کی وجہ سے عوام کو بنیادی سہولیات تک میسر نہیں۔

انہوں نے کہا کہ میرے حلقے میں فیکٹریوں میں پانی بیچا جارہا ہے، مرکز میں ہم سندھ کے نمائندے ہیں لیکن کراچی کو سیراب نہیں کیا گیا، سڑکوں سمیت کوئی سہولت موجود نہیں، پی پی نے ہمیشہ ملک و جمہوریت دشمنی کا ثبوت دیا۔

حلیم عادل شیخ نے کہا کہ میرے حلقے میں پینے کا پانی نہیں، پانی دینا سندھ حکومت کی ذمہ داری ہے، پہلے ٹینکرز آتے تھے اب میری دشمنی میں ٹینکرز بند کردیے گئے ہیں، آج سندھ میں یزیدی حکمران آچکے ہیں، وزیراعلیٰ سندھ نے پانی کو روکا ہوا ہے، مجھ سے جھگڑا ہے تو ساڑھے 4 لاکھ عوام کو سزا کیوں دی جارہی ہے؟ اگر پانی نہیں ملا تو ان کا گھیراؤ کریں گے۔

اپوزیشن لیڈر سندھ اسمبلی کا کہنا تھا کہ کراچی پورے پاکستان کو چلاتا ہے، 90 فیصد پورے سندھ کا ریونیو کراچی دیتا ہے، کراچی کے عوام نے پی پی کو ووٹ نہیں دیا جس کی سزا آج عوام کو دی جارہی ہے، کراچی میں نلکے میں پانی آتا نہیں ٹینکر میں ختم ہوتا نہیں، ٹینکر مافیا کے سربراہ مراد علی شاہ اور بلاول زرداری ہیں، 250 ارب کا پانی ٹینکرز کے ذریعے چوری ہورہا ہے۔

حلیم عادل شیخ نے کہا کہ سندھ پبلک سروس کمیشن کا سسٹم ٹھیک ہونا چاہیے تھا، میرٹ والے افراد دوبارہ آسکتے ہیں، کرپشن اور رشوت خوری کی وجہ سے نوکریوں کی بولیاں لگتی ہیں اور غریب ہڑھے لکھے محنتی نوجوان میرٹ نہ ہونے کی وجہ سے رہ جاتے ہیں۔

انہوں ںے کہا کہ وفاقی سرکار نے سندھ میں 65 ارب کورونا میں دیے، سندھ کو 1100 ارب سے زیادہ کا پیکیج دیا ہے، سندھ کو عوام کو وفاقی حکومت بنیادی سہولیات فراہم کررہی ہے، کامیاب جوان پروگرام کے تحت 10 ارب سندھ کا حصہ ہے، لاکھوں نوکریاں بڑھ چکی ہیں، ہم نے سندھ کی اسکولوں سے بھینسیں نکالیں، سندھ حکومت نے صوبے کے تعلیمی نظام کو تباہ کر دیا ہے۔





Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *